قرآنِ کریم (قرآن مجید) کا اردو ترجمہ بمعہ عربی متن

از مولانا محمد علی

Urdu Translation of the Holy Quran

by Maulana Muhammad Ali

Surah 59: Al-Hashr (Revealed at Madinah: 3 sections, 24 verses)

(59) سُوۡرَۃُ الۡحَشۡرِ مَدَنِیَّۃٌ

بِسۡمِ اللّٰہِ الرَّحۡمٰنِ الرَّحِیۡمِ

اللہ بے انتہا رحم والے ، بار بار رحم کرنے والےکے نام سے

رکوع 1

سَبَّحَ  لِلّٰہِ  مَا فِی السَّمٰوٰتِ وَ مَا فِی الۡاَرۡضِ ۚ وَ ہُوَ الۡعَزِیۡزُ  الۡحَکِیۡمُ ﴿۱﴾

۱۔ اللہ (تعالیٰ) کی تسبیح کرتا ہے جو کچھ آسمانوں میں ہے اور جو کچھ زمین میں ہے اور وہ غالب حکمت والا ہے۔

ہُوَ الَّذِیۡۤ  اَخۡرَجَ الَّذِیۡنَ کَفَرُوۡا مِنۡ اَہۡلِ الۡکِتٰبِ مِنۡ دِیَارِہِمۡ  لِاَوَّلِ الۡحَشۡرِ ؕؔ مَا ظَنَنۡتُمۡ اَنۡ  یَّخۡرُجُوۡا وَ ظَنُّوۡۤا  اَنَّہُمۡ  مَّانِعَتُہُمۡ حُصُوۡنُہُمۡ مِّنَ اللّٰہِ  فَاَتٰىہُمُ اللّٰہُ مِنۡ حَیۡثُ لَمۡ یَحۡتَسِبُوۡا ٭  وَ قَذَفَ فِیۡ  قُلُوۡبِہِمُ  الرُّعۡبَ یُخۡرِبُوۡنَ بُیُوۡتَہُمۡ  بِاَیۡدِیۡہِمۡ  وَ اَیۡدِی الۡمُؤۡمِنِیۡنَ ٭  فَاعۡتَبِرُوۡا یٰۤاُولِی الۡاَبۡصَارِ ﴿۲﴾

۲۔ وہی ہے جس نے اہل کتاب میں سے ان لوگوں کو جو کافر ہیں اپنے گھروں میں سے پہلی جلاوطنی کے لیے نکالا۔ تم خیال نہ کرتے تھے کہ وہ نکل جائیں اور وہ سمجھتے تھے کہ ان کے قلعے انہیں اللہ (کی سزا) سے بچالیں گے، سو اللہ ان پر وہاں سے آیا جہاں سے انہیں گمان بھی نہ تھا اور ان کے دلوں میں رعب ڈال دیا،  وہ اپنے گھروں کو اپنے ہاتھوں سے ویران کرتے تھے اور مومنوں کے ہاتھوں سے بھی۔ سو اَے بصیرت والوعبرت حاصل کرو۔

وَ لَوۡ لَاۤ  اَنۡ  کَتَبَ اللّٰہُ عَلَیۡہِمُ  الۡجَلَآءَ لَعَذَّبَہُمۡ  فِی الدُّنۡیَا ؕ وَ لَہُمۡ  فِی الۡاٰخِرَۃِ عَذَابُ النَّارِ ﴿۳﴾

۳۔ اور اگر اللہ نے ان پر جلاوطنی نہ لکھ دی ہوتی تو انہیں دنیا میں عذاب دیتا اور آخرت میں ان کے لیے آگ کاعذاب ہے۔

ذٰلِکَ بِاَنَّہُمۡ  شَآقُّوا اللّٰہَ وَ رَسُوۡلَہٗ ۚ وَ مَنۡ یُّشَآقِّ  اللّٰہَ  فَاِنَّ اللّٰہَ شَدِیۡدُ الۡعِقَابِ ﴿۴﴾

۴۔ یہ اس لیے کہ انہوں نے اللہ اور اس کے رسول ؐ کی مخالفت کی  اور جو کوئی اللہ کی مخالفت کرتا ہے تو اللہ سزا دینے میں سخت ہے۔

مَا  قَطَعۡتُمۡ مِّنۡ  لِّیۡنَۃٍ  اَوۡ  تَرَکۡتُمُوۡہَا قَآئِمَۃً  عَلٰۤی  اُصُوۡلِہَا فَبِاِذۡنِ اللّٰہِ وَ لِیُخۡزِیَ الۡفٰسِقِیۡنَ ﴿۵﴾

۵۔ تم نے جو کھجور کا درخت کاٹا،  یا اُسے اپنی جڑوں پر کھڑا چھوڑا۔  سو اللہ (تعالیٰ) کے اِذن سے تھا اور تاکہ وہ نافرمانوں کورسوا کرے۔

وَ مَاۤ  اَفَآءَ اللّٰہُ  عَلٰی رَسُوۡلِہٖ  مِنۡہُمۡ فَمَاۤ اَوۡجَفۡتُمۡ عَلَیۡہِ مِنۡ خَیۡلٍ وَّ لَا رِکَابٍ وَّ لٰکِنَّ اللّٰہَ یُسَلِّطُ رُسُلَہٗ  عَلٰی مَنۡ یَّشَآءُ ؕ وَ اللّٰہُ  عَلٰی کُلِّ شَیۡءٍ  قَدِیۡرٌ ﴿۶﴾

۶۔ اور اللہ نے اپنےرسول کو جو اِن سے جو مال غنیمت دلوایا تو تم نے اس پر گھوڑے نہیں دوڑائے اور نہ اونٹ،  لیکن اللہ اپنے رسولوں کوجس پر چاہتا ہے تسلّط دے دیتا ہے اور اللہ (تعالیٰ) ہر چیز پر قادر ہے۔

مَاۤ  اَفَآءَ  اللّٰہُ  عَلٰی رَسُوۡلِہٖ  مِنۡ  اَہۡلِ الۡقُرٰی  فَلِلّٰہِ  وَ لِلرَّسُوۡلِ وَ  لِذِی الۡقُرۡبٰی وَ الۡیَتٰمٰی وَ الۡمَسٰکِیۡنِ وَ ابۡنِ السَّبِیۡلِ ۙ کَیۡ لَا یَکُوۡنَ  دُوۡلَۃًۢ  بَیۡنَ الۡاَغۡنِیَآءِ مِنۡکُمۡ ؕ وَ مَاۤ  اٰتٰىکُمُ الرَّسُوۡلُ  فَخُذُوۡہُ ٭ وَ مَا نَہٰىکُمۡ  عَنۡہُ فَانۡتَہُوۡا ۚ وَ  اتَّقُوا اللّٰہَ ؕ اِنَّ اللّٰہَ شَدِیۡدُ الۡعِقَابِ ۘ﴿۷﴾

۷۔ جو اللہ نے اپنے رسولؐ  کو بستیوں والوں سے مال غنیمت دلایا تو وہ اللہ کے لیے اور رسولؐ  کے لیے اور قربییوں کے لیے اور یتیموں اور مسکینوں اور مسافر (کے لیے ہے) تاکہ تم میں سے دولت مندوں کے اندر نہ پھرتا رہے۔ اور جو تمہیں رسول دیتا ہے وہ لے لو،  اور جس سے وہ تمہیں روکتا ہے رُک جاؤ  اور اللہ کاتقویٰ کرو۔ اللہ (تعالیٰ) سزا دینے میں سخت ہے۔

لِلۡفُقَرَآءِ  الۡمُہٰجِرِیۡنَ  الَّذِیۡنَ  اُخۡرِجُوۡا  مِنۡ  دِیَارِہِمۡ وَ اَمۡوَالِہِمۡ یَبۡتَغُوۡنَ  فَضۡلًا مِّنَ اللّٰہِ  وَ رِضۡوَانًا وَّ یَنۡصُرُوۡنَ اللّٰہَ وَ رَسُوۡلَہٗ ؕ اُولٰٓئِکَ ہُمُ الصّٰدِقُوۡنَ ۚ﴿۸﴾

۸۔ (وہ) مہاجر ناداروں کے لیے ہے جو اپنے گھروں اور اپنے مالوں سے نکالے گئے ہیں، اللہ کا فضل اور رضا چاہتے ہیں اور اللہ (تعالیٰ) اور اس کے رسولؐ  کی مدد کرتے ہیں، یہی سچےّ ہیں۔

وَ الَّذِیۡنَ  تَبَوَّؤُ الدَّارَ وَ الۡاِیۡمَانَ مِنۡ قَبۡلِہِمۡ یُحِبُّوۡنَ مَنۡ  ہَاجَرَ  اِلَیۡہِمۡ وَ لَا یَجِدُوۡنَ  فِیۡ صُدُوۡرِہِمۡ حَاجَۃً  مِّمَّاۤ اُوۡتُوۡا وَ یُؤۡثِرُوۡنَ  عَلٰۤی  اَنۡفُسِہِمۡ وَ لَوۡ کَانَ بِہِمۡ خَصَاصَۃٌ ؕ۟ وَ مَنۡ یُّوۡقَ شُحَّ نَفۡسِہٖ  فَاُولٰٓئِکَ ہُمُ  الۡمُفۡلِحُوۡنَ ۚ﴿۹﴾

۹۔ اور وہ جو اِن سے پہلے (ہجرت کے) گھر میں رہتے اور ایمان رکھتے تھے وہ اس سے محبت کرتے ہیں جو ہجرت کرکے ان کی طرف آتا ہے اور اپنے سینوں میں اس کی کوئی حاجت نہیں پاتے جوانہیں دیاجاتاہے اور وہ اپنے آپ پر (انہیں) مقدم رکھتے ہیں گو انہیں تنگی ہی ہو  اور جو شخص اپنے نفس کے بخل سے بچ جائے تو وہی کامیاب ہوں گے۔

وَ الَّذِیۡنَ جَآءُوۡ مِنۡۢ  بَعۡدِہِمۡ یَقُوۡلُوۡنَ رَبَّنَا  اغۡفِرۡ لَنَا وَ لِاِخۡوَانِنَا  الَّذِیۡنَ سَبَقُوۡنَا بِالۡاِیۡمَانِ وَ لَا تَجۡعَلۡ  فِیۡ قُلُوۡبِنَا غِلًّا  لِّلَّذِیۡنَ  اٰمَنُوۡا  رَبَّنَاۤ  اِنَّکَ رَءُوۡفٌ  رَّحِیۡمٌ ﴿٪۱۰﴾

۱۰۔ اور وہ جو ان کے بعد آئے کہتے ہیں ہمارے رب  ہماری مغفرت کر اور ہمارے بھائیوں کی جو ایمان میں ہم سے سبقت لے گئے اور ہمارے دلوں میں ان کےلیے جو ایمان لائے حسد نہ پیدا ہونے دے۔ اے ہمارے رب تو مہربان رحم کرنے والا ہے۔

رکوع 2

اَلَمۡ  تَرَ  اِلَی الَّذِیۡنَ نَافَقُوۡا یَقُوۡلُوۡنَ لِاِخۡوَانِہِمُ  الَّذِیۡنَ کَفَرُوۡا مِنۡ  اَہۡلِ الۡکِتٰبِ  لَئِنۡ  اُخۡرِجۡتُمۡ  لَنَخۡرُجَنَّ مَعَکُمۡ  وَ لَا  نُطِیۡعُ  فِیۡکُمۡ  اَحَدًا  اَبَدًا ۙ وَّ اِنۡ  قُوۡتِلۡتُمۡ  لَنَنۡصُرَنَّکُمۡ ؕ وَ اللّٰہُ  یَشۡہَدُ  اِنَّہُمۡ   لَکٰذِبُوۡنَ ﴿۱۱﴾

۱۱۔ کیا تو نے انہیں نہیں دیکھا جو منافق ہیں وہ اپنے بھائیوں کو جو اہل کتاب میں سے کافر ہیں کہتے ہیں اگر تمہیں نکالاگیا تو ہم تمہارے ساتھ نکلیں گے اور ہم تمہارے معاملہ میں کبھی کسی کی اطاعت نہ کریں گے اور اگر تم سے جنگ کی گئی تو ہم ضرور تمہاری مدد کریں گے۔ اور اللہ (تعالیٰ) گواہی دیتاہے کہ وہ یقیناً جھوٹے ہیں۔

لَئِنۡ  اُخۡرِجُوۡا لَا یَخۡرُجُوۡنَ  مَعَہُمۡ ۚ وَ لَئِنۡ  قُوۡتِلُوۡا  لَا یَنۡصُرُوۡنَہُمۡ ۚ وَ لَئِنۡ نَّصَرُوۡہُمۡ  لَیُوَلُّنَّ  الۡاَدۡبَارَ ۟  ثُمَّ لَا یُنۡصَرُوۡنَ ﴿۱۲﴾

۱۲۔ اگر انہیں نکالاگیا تو یہ ان کے ساتھ نہ نکلیں گے اور اگر ان سے جنگ ہوئی تو یہ ان کی مدد نہ کریں گے اور اگر یہ ان کی مدد کریں تو پیٹھیں پھیردیں گے۔ پھر ان کی کوئی مدد نہ ہوگی۔

لَاَنۡتُمۡ  اَشَدُّ رَہۡبَۃً  فِیۡ  صُدُوۡرِہِمۡ  مِّنَ اللّٰہِ ؕ ذٰلِکَ بِاَنَّہُمۡ  قَوۡمٌ لَّا یَفۡقَہُوۡنَ ﴿۱۳﴾

۱۳۔ اللہ کی نسبت تمہارا ڈر ان کے دلوں میں بہت زیادہ ہے یہ اس لیے کہ وہ ایسے لوگ ہیں جو سمجھتے نہیں۔

لَا یُقَاتِلُوۡنَکُمۡ جَمِیۡعًا  اِلَّا فِیۡ  قُرًی مُّحَصَّنَۃٍ  اَوۡ مِنۡ  وَّرَآءِ  جُدُرٍ ؕ بَاۡسُہُمۡ بَیۡنَہُمۡ  شَدِیۡدٌ ؕ تَحۡسَبُہُمۡ جَمِیۡعًا وَّ قُلُوۡبُہُمۡ شَتّٰی ؕ ذٰلِکَ بِاَنَّہُمۡ  قَوۡمٌ لَّا یَعۡقِلُوۡنَ ﴿ۚ۱۴﴾

۱۴۔ یہ اکٹھے (بھی) تم سے نہیں لڑیں گے، سوائے اس کے کہ قلعوں سے محفوظ کی ہوئی بستیوں میں ہوں یا دیواروں کی آڑ میں،  ان کی لڑائی آپس میں سخت ہے تُو انہیں اکٹھا سمجھتا ہے اور ان کے دل علیحدہ علیحدہ ہیں یہ اس لیے کہ وہ ایسے لوگ ہیں جو عقل سے کام نہیں لیتے۔

کَمَثَلِ الَّذِیۡنَ مِنۡ قَبۡلِہِمۡ قَرِیۡبًا ذَاقُوۡا وَبَالَ  اَمۡرِہِمۡ ۚ وَ  لَہُمۡ  عَذَابٌ  اَلِیۡمٌ ﴿ۚ۱۵﴾

۱۵۔ (ان کی حالت) ان لوگوں کی حالت کی طرح ہے جو ان سے پہلے قریب ہی اپنے کام کی سزا چکھ چکے ہیں اور ان کے لیے دردناک عذاب ہے۔

کَمَثَلِ الشَّیۡطٰنِ اِذۡ قَالَ  لِلۡاِنۡسَانِ اکۡفُرۡ ۚ فَلَمَّا کَفَرَ  قَالَ  اِنِّیۡ  بَرِیۡٓءٌ مِّنۡکَ  اِنِّیۡۤ  اَخَافُ اللّٰہَ  رَبَّ الۡعٰلَمِیۡنَ ﴿۱۶﴾

۱۶۔ شیطان کی حالت کی طرح، جب وہ انسان کو کہتا ہے کفر کر۔ پھر جب وہ کفر کرتا ہے توکہتا ہے میں تجھ سے بے تعلق ہوں۔ میں اللہ جہانوں کے رب سے ڈرتا ہوں۔

فَکَانَ عَاقِبَتَہُمَاۤ  اَنَّہُمَا فِی النَّارِ خَالِدَیۡنِ فِیۡہَا ؕ وَ ذٰلِکَ  جَزٰٓؤُا الظّٰلِمِیۡنَ ﴿٪۱۷﴾

۱۷۔ سو ان دونوں کا انجام یہ ہے کہ وہ دونوں آگ میں ہیں، اسی میں رہیں گے اور یہی ظالموں کی سزا ہے۔

رکوع 3

یٰۤاَیُّہَا الَّذِیۡنَ اٰمَنُوا اتَّقُوا اللّٰہَ  وَ لۡتَنۡظُرۡ  نَفۡسٌ مَّا قَدَّمَتۡ لِغَدٍ ۚ وَ اتَّقُوا اللّٰہَ ؕ اِنَّ اللّٰہَ  خَبِیۡرٌۢ   بِمَا تَعۡمَلُوۡنَ ﴿۱۸﴾

۱۸۔ اے لوگو!  جو ایمان لائے ہو اللہ کا تقویٰ کرو اور ہر نفس غور کرے کہ اس نے کل کے لیے کیا آگے بھیجا ہے اور اللہ کا تقویٰ کرو، اللہ اس سے خبردار ہے جو تم کرتے ہو۔

وَ لَا تَکُوۡنُوۡا کَالَّذِیۡنَ نَسُوا اللّٰہَ فَاَنۡسٰہُمۡ  اَنۡفُسَہُمۡ ؕ اُولٰٓئِکَ ہُمُ الۡفٰسِقُوۡنَ ﴿۱۹﴾

۱۹۔ اور ان لوگوں کی طرح نہ ہوجانا جنہوں نے اللہ کو بھلادیا، سو اس نے انہیں اپنا آپ بھلوادیا،  یہی نافرمان ہیں۔

لَا یَسۡتَوِیۡۤ  اَصۡحٰبُ النَّارِ وَ اَصۡحٰبُ الۡجَنَّۃِ ؕ اَصۡحٰبُ الۡجَنَّۃِ ہُمُ الۡفَآئِزُوۡنَ ﴿۲۰﴾

۲۰۔ آگ والے اور جنّت والے برابر نہیں۔ جنت والے ہی بامراد ہیں۔

لَوۡ اَنۡزَلۡنَا ہٰذَا الۡقُرۡاٰنَ عَلٰی جَبَلٍ لَّرَاَیۡتَہٗ  خَاشِعًا مُّتَصَدِّعًا مِّنۡ خَشۡیَۃِ اللّٰہِ ؕ وَ تِلۡکَ الۡاَمۡثَالُ نَضۡرِبُہَا لِلنَّاسِ لَعَلَّہُمۡ یَتَفَکَّرُوۡنَ ﴿۲۱﴾

۲۱۔ اگر ہم اس قرآن کو پہاڑ پراتارتے تو تُو اسے اللہ کے خوف سے گرا ہوا  پھٹا ہوا دیکھتا۔ اور  یہ مثالیں ہم لوگوں کے لیے بیان کرتے ہیں تاکہ وہ فکر کریں۔

ہُوَ اللّٰہُ  الَّذِیۡ  لَاۤ  اِلٰہَ  اِلَّا ہُوَ ۚ عٰلِمُ الۡغَیۡبِ وَ الشَّہَادَۃِ ۚ ہُوَ  الرَّحۡمٰنُ الرَّحِیۡمُ ﴿۲۲﴾

۲۲۔ وہی اللہ ہے اس کے سوا کوئی معبود نہیں پوشیدہ اور ظاہر کا جاننے والا  وہ بے انتہا رحم والا بار بار رحم کرنے والا ہے۔

ہُوَ اللّٰہُ  الَّذِیۡ  لَاۤ  اِلٰہَ  اِلَّا ہُوَ ۚ اَلۡمَلِکُ الۡقُدُّوۡسُ السَّلٰمُ  الۡمُؤۡمِنُ الۡمُہَیۡمِنُ الۡعَزِیۡزُ  الۡجَبَّارُ  الۡمُتَکَبِّرُ ؕ سُبۡحٰنَ اللّٰہِ عَمَّا  یُشۡرِکُوۡنَ ﴿۲۳﴾

۲۳۔ وہی اللہ ہے اس کے سوائے کوئی معبود نہیں ،  بادشاہ پاک سلامتی والا، امن دینےوالا نگہبان غالب بگڑے کو بنانے والا، سب بڑائیوں کامالک۔ اللہ اس سے پاک ہے جو وہ شرک کرتے ہیں۔

ہُوَ اللّٰہُ  الۡخَالِقُ الۡبَارِئُ  الۡمُصَوِّرُ لَہُ الۡاَسۡمَآءُ  الۡحُسۡنٰی ؕ یُسَبِّحُ لَہٗ  مَا فِی السَّمٰوٰتِ وَ الۡاَرۡضِ ۚ وَ ہُوَ الۡعَزِیۡزُ الۡحَکِیۡمُ ﴿٪۲۴﴾

۲۴۔ وہی اللہ ہے (مادہ کا) پید اکرنے والا، روح کا پیداکرنے والا، (مختلف) شکلیں  بنانے والا، اسی کے لیے سب اچھے نام ہیں۔ جو کچھ آسمانوں اور زمین میں ہے اسی کی تسبیح کرتا ہے اور وہ غالب حکمت والا ہے۔

Top