قرآنِ کریم (قرآن مجید) کا اردو ترجمہ بمعہ عربی متن

از مولانا محمد علی

Urdu Translation of the Holy Quran

by Maulana Muhammad Ali

Surah 83: At-Tatfif (Revealed at Makkah: 36 verses)

(83)  سُوۡرَۃُ المُطَفِّفِیۡنَ مَکِّیَّۃٌ

بِسۡمِ اللّٰہِ الرَّحۡمٰنِ الرَّحِیۡمِ

اللہ بے انتہا رحم والے ، بار بار رحم کرنے والےکے نام سے

وَیۡلٌ   لِّلۡمُطَفِّفِیۡنَ ۙ﴿۱﴾

۱۔ کمی کرنےو الوں کے لیے تباہی ہے۔

الَّذِیۡنَ  اِذَا  اکۡتَالُوۡا عَلَی النَّاسِ یَسۡتَوۡفُوۡنَ ۫﴿ۖ۲﴾

۲۔ جو جب لوگوں سے ماپ کرلیتے ہیں،  تو پورا کرلیتے ہیں۔

وَ  اِذَا کَالُوۡہُمۡ  اَوۡ وَّزَنُوۡہُمۡ  یُخۡسِرُوۡنَ ﴿ؕ۳﴾

۳۔ اور جب انہیں ماپ یا تول کر دیتے ہیں تو کم کردیتے ہیں۔

اَلَا یَظُنُّ  اُولٰٓئِکَ اَنَّہُمۡ مَّبۡعُوۡثُوۡنَ ۙ﴿۴﴾

۴۔ کیا وہ خیال نہیں کرتے کہ وہ اٹھائے جائیں گے۔

لِیَوۡمٍ عَظِیۡمٍ ۙ﴿۵﴾

۵۔ ایک بڑے دن کے لیے۔

یَّوۡمَ یَقُوۡمُ النَّاسُ لِرَبِّ الۡعٰلَمِیۡنَ ؕ﴿۶﴾

۶۔ جس دن لوگ جہانوں کے رب کے سامنے کھڑے ہوں گے۔

کَلَّاۤ  اِنَّ  کِتٰبَ الۡفُجَّارِ لَفِیۡ  سِجِّیۡنٍ ؕ﴿۷﴾

۷۔ ہرگز نہیں، بدکاروں کے اعمال قید خانے میں ہیں۔

وَ مَاۤ  اَدۡرٰىکَ مَا سِجِّیۡنٌ ؕ﴿۸﴾

۸۔ اور تو کیا جانتا ہے قید خانہ کیا ہے۔

کِتٰبٌ مَّرۡقُوۡمٌ ؕ﴿۹﴾

۹۔ وہ ایک لکھی ہوئی کتاب ہے۔

وَیۡلٌ یَّوۡمَئِذٍ لِّلۡمُکَذِّبِیۡنَ ﴿ۙ۱۰﴾

۱۰۔ اس دن جھٹلانےو الوں کے لیے تباہی ہے۔

الَّذِیۡنَ یُکَذِّبُوۡنَ بِیَوۡمِ الدِّیۡنِ ﴿ؕ۱۱﴾

۱۱۔ جو جزا کے دن کو جھٹلاتے ہیں۔

وَ مَا یُکَذِّبُ بِہٖۤ  اِلَّا کُلُّ مُعۡتَدٍ اَثِیۡمٍ ﴿ۙ۱۲﴾

۱۲۔ اور اسے کوئی نہیں جھٹلاتا مگر ہر حد سے بڑھنے والاگنہگار۔

اِذَا  تُتۡلٰی عَلَیۡہِ  اٰیٰتُنَا  قَالَ اَسَاطِیۡرُ الۡاَوَّلِیۡنَ ﴿ؕ۱۳﴾

۱۳۔ جب اس پر ہماری آیتیں پڑھی جاتی ہیں، کہتا ہے پہلوں کی کہانیاں ہیں۔

کَلَّا بَلۡ ٜ رَانَ عَلٰی قُلُوۡبِہِمۡ مَّا کَانُوۡا یَکۡسِبُوۡنَ ﴿۱۴﴾

۱۴۔ ہرگز نہیں بلکہ ان کے دلوں پر ان کے عملوں کا زنگ بیٹھ گیا ہے۔

کَلَّاۤ  اِنَّہُمۡ عَنۡ رَّبِّہِمۡ یَوۡمَئِذٍ لَّمَحۡجُوۡبُوۡنَ ﴿ؕ۱۵﴾

۱۵۔ ہرگز نہیں وہ اپنے رب سے اس دن اوجھل میں ہوں گے۔

ثُمَّ  اِنَّہُمۡ  لَصَالُوا الۡجَحِیۡمِ ﴿ؕ۱۶﴾

۱۶۔ پھر وہ ضرور دوزخ میں داخل ہوں گے۔

ثُمَّ یُقَالُ ہٰذَا الَّذِیۡ کُنۡتُمۡ بِہٖ تُکَذِّبُوۡنَ ﴿ؕ۱۷﴾

۱۷۔ پھر کہاجائے گا یہ ہے جسے تم جھٹلاتے تھے۔

کَلَّاۤ  اِنَّ  کِتٰبَ الۡاَبۡرَارِ لَفِیۡ عِلِّیِّیۡنَ ﴿ؕ۱۸﴾

۱۸۔ ہرگز نہیں، نیکوں کےا عمال بلند مقامات پر ہیں۔

وَ مَاۤ  اَدۡرٰىکَ مَا عِلِّیُّوۡنَ ﴿ؕ۱۹﴾

۱۹۔ اور تجھے کیا معلوم ہے بلند مقامات کیا ہیں۔

کِتٰبٌ مَّرۡقُوۡمٌ ﴿ۙ۲۰﴾

۲۰۔ وہ ایک لکھی ہوئی کتاب ہے۔

یَّشۡہَدُہُ  الۡمُقَرَّبُوۡنَ ﴿ؕ۲۱﴾

۲۱۔ جسے مقرب موجود پائیں گے۔

اِنَّ  الۡاَبۡرَارَ لَفِیۡ نَعِیۡمٍ ﴿ۙ۲۲﴾

۲۲۔ یقیناً نیک بندے نعمتوں میں ہوں گے۔

عَلَی الۡاَرَآئِکِ یَنۡظُرُوۡنَ ﴿ۙ۲۳﴾

۲۳۔تختوں پر دیکھ رہے ہوں گے۔

تَعۡرِفُ فِیۡ  وُجُوۡہِہِمۡ نَضۡرَۃَ  النَّعِیۡمِ ﴿ۚ۲۴﴾

۲۴۔ تو اُن کے چہروں پرنعمتوں کی تازگی معلوم کرے گا۔

یُسۡقَوۡنَ مِنۡ  رَّحِیۡقٍ مَّخۡتُوۡمٍ ﴿ۙ۲۵﴾

۲۵۔ انہیں ایک خالص پینے کی چیز پلائی جائے گی جس پر مہر لگی ہوئی ہے۔

خِتٰمُہٗ  مِسۡکٌ ؕ وَ فِیۡ ذٰلِکَ فَلۡیَتَنَافَسِ الۡمُتَنَافِسُوۡنَ ﴿ؕ۲۶﴾

۲۶۔ اس کی مہر مشک کی ہے اور اس میں چاہیٔے کہ رغبت کرنے والے رغبت کریں۔

وَ مِزَاجُہٗ  مِنۡ تَسۡنِیۡمٍ ﴿ۙ۲۷﴾

۲۷۔ اور اس کی ملاوٹ اس پانی سے ہے جو بلندیوں سے بہتا ہے۔

عَیۡنًا یَّشۡرَبُ بِہَا الۡمُقَرَّبُوۡنَ ﴿ؕ۲۸﴾

۲۸۔ وہ ایک چشمہ ہے جس سے مقرب پیتے ہیں۔

اِنَّ  الَّذِیۡنَ اَجۡرَمُوۡا کَانُوۡا مِنَ الَّذِیۡنَ اٰمَنُوۡا یَضۡحَکُوۡنَ ﴿۫ۖ۲۹﴾

۲۹۔ جو مجرم ہیں وہ ان پر جو ایمان لائے ہنسا کرتے تھے۔

وَ اِذَا  مَرُّوۡا بِہِمۡ یَتَغَامَزُوۡنَ ﴿۫ۖ۳۰﴾

۳۰۔ اور جب ان پر گزرتے تو آنکھوں سے اشارے کرتے تھے۔

وَ اِذَا  انۡقَلَبُوۡۤا  اِلٰۤی  اَہۡلِہِمُ  انۡقَلَبُوۡا فَکِہِیۡنَ ﴿۫ۖ۳۱﴾

۳۱۔ اور جب اپنے ساتھیوں کی طرف لوٹ کر جاتے (تو) اتراتے ہوئے لوٹتے۔

وَ اِذَا رَاَوۡہُمۡ قَالُوۡۤا اِنَّ ہٰۤؤُلَآءِ لَضَآلُّوۡنَ ﴿ۙ۳۲﴾

۳۲۔ اور جب انہیں دیکھتے کہتے، یہ یقیناً گمراہ ہیں۔

وَ  مَاۤ  اُرۡسِلُوۡا عَلَیۡہِمۡ  حٰفِظِیۡنَ ﴿ؕ۳۳﴾

۳۳۔ اور وہ ان پر محافظ بنا کر نہیں بھیجے گئے۔

فَالۡیَوۡمَ الَّذِیۡنَ اٰمَنُوۡا مِنَ الۡکُفَّارِ یَضۡحَکُوۡنَ ﴿ۙ۳۴﴾

۳۴۔ سو آج جو ایمان لائے، وہ کافروں پر ہنستے ہیں۔

عَلَی الۡاَرَآئِکِ ۙ یَنۡظُرُوۡنَ ﴿ؕ۳۵﴾

۳۵۔ تختوں پر بیٹھے دیکھ رہے ہیں۔

ہَلۡ  ثُوِّبَ الۡکُفَّارُ  مَا کَانُوۡا یَفۡعَلُوۡنَ ﴿٪۳۶﴾

۳۶۔ کافروں کو وہی بدلہ ملا جو وہ کرتے تھے۔

Top